نوازشریف اور دوسرے ” بڑے” لوگ

36

پچھلے 70 سال سے پاکستان میں ھر وہ شخص جسکا تعلق زندگی کے کسی بھی شعبے سے ھو، اس نے دولت اور اپنے عہدے کے بل بوتے پر یہ تصور کرلیا تھا کہ قانون کا اطلاق صرف عام آدمی پر ھوتا ھے اور عدالتوں اور کچہریوں کی رونقیں ان عام اور غریب لوگوں کی وجہ سے آ باد ہیں اور ھمیشہ آباد رہیں گی۔

نوازشریف اور دوسرے ” بڑے” لوگوں کو سزا ایک نئے اور روشن پاکستان کا آغاز ھے اور ابھی بہت جلد ھزاروں، “بڑے” لوگ اپنے منطقی انجام کو پہنچے والے ہیں۔بھلا ان لوگوں کی کیا اوقات ھے جب وہ ھستی جس کہ لئے ہہ سارا جہان تخلیق کیا گیا اپنی لاڈلی بیٹی فاطمہ کے ھاتھ کاٹنے کی بات کرے تو ان لوگوں کو کیوں چھوڑا جائے ۔کیا نبی اور خلفائے راشدین کی سنہری باتیں صرف فرہم میں لگا کہ گھروں اور مسجدوں میں لٹکانے کے لئے ہیں؟؟