مریم نواز کو دیکھ کر ان کے ساتھ سیلفیاں بنانا لوگوں کو پڑ گیا مہنگا، جج نے سخت ایکشن لے لیا

4
احتساب عدالت نے چوہدری شوگر ملزکیس میں مریم نواز اور یوسف عباس کے جوڈیشل ریمانڈ میں 14 روز کی توسیع کر دی ہے تاہم اس موقع پر سماعت کے دوران لوگوں کی مریم نواز کے ساتھ سیلفیوں پر جج نے سخت برہمی کا اظہار کیا۔

احتساب عدالت کے جج جواد الحسن نے چوہدری شوگر ملز کیس کی سماعت کی جس دوران مریم نواز اور یوسف عباس کو پیش کیا گیا ، پیشی کے موقع پر عدالت میں ن لیگی کارکنان کی بڑی تعداد بھی موجود تھی اور لوگوں نے مریم نواز کو دیکھ کر ان کے ساتھ سیلفیاں بنانا شرو ع کر دیں، جج جواد الحسن نے ان سب پر سخت برہمی کا اظہار کیا اور تمام لوگوں کو فون بند کرنے کا حکم دیا ۔

جج احتساب عدالت نے مریم اور یوسف عباس کو روسٹرم پر طلب کیا تاہم مریم نواز کے ساتھ روسٹرم پر رش ہونے پر انہیں بیٹھنے کی ہدایت کردی، عدالت کے بار بار منع کرنے پر لیگی کارکنان نے عدالت میں شور شرابا بھی کیا۔بعد ازاں عدالت نے مریم نواز اور یوسف عباس کے جوڈیشل ریمانڈ میں 14روزکی توسیع کردی اور انہیں 23 اکتوبر کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔

خیال رہے کہ مسلم لیگ (ن) کی رہنما مریم نواز کو نیب حکام نے چوہدری شوگر ملز کیس کے سلسلے میں 8 اگست کو کوٹ لکھپت جیل سے میاں نوازشریف سے ملاقات کے موقع پر گرفتار کیا تھا۔